Monday, February 8, 2016

PTI - Renaissance (Part-1)

By: Shah Zalmay Khan
.
P   T   I - what comes to mind when one hears this word?
- A party led by a charismatic, popular and honest man who gave the country a lot - Imran Khan?
- A party that seems to be contesting (and mostly ending up DISTANT RUNNER UP despite apparent tough fight) in jealously guarded strongholds of other parties - North/Central Punjab (PMLN), South Punjab (PPP + Independents), Urban Sindh (MQM), Rural Sindh (PPP), Peshawar Valley (ANP), Hazara (PMLN), South KP (JUI-F) and Balochistan (Achakzai + JUI + Sardars + Nationalists)?
- A party represented by enthusiastic young supporters on social media platforms - from outright abusive trolls to thoughtful supporters who take honest pains to explain every (right or even wrong) move of the leadership?
- A party whose leaders / supporters seem to be whining 24/7 on media, social media and in the public sphere about what all is wrong with the country – from shiny metro buses (and pathetic health services) in Lahore TO kids dying of hunger & disease in Thar TO mafia politics in Karachi TO injustices with smaller provinces on CPEC TO the federal govt’s step-motherly attitude with the PTI-led KPK province?
- A party that is struggling to define & exhibit its governance direction halfway into its tenure in the only province under its charge – KP?
- A party that has been in politics for past 20 years but stands as directionless today (or perhaps even more), than it was on its foundation day?

What exactly does PTI stand for? What it wants to achieve? And how? Any direction or roadmap? Any Think Tank advising the party leadership (read Chairman) on policy matters or party organization? On what and when to speak (and tweet)? Or when damn not to?
Who decides which issues PTI focuses; for how much time and with how much intensity?

Is any SWOT analysis of the party affairs being done in light of whatever is transpiring since 2013 elections, and especially after the Long March / Dharna?
Has any feasibility study been done of what the party can (and cannot) achieve in the varying political environ of a country with vastly differing (and often clashing) interests of different groups (based on region / ethnicity / social structure / income status / education / urban exposure)?

It seems Imran Khan – and PTI – have been assuming (and still do) that it is the people’s responsibility to understand THEM; feel the difference between THEM and others; and choose THEM, rejecting the incumbents. Seems like a plausible assumption. No?

NOOOOO.

Strange and illogical as it may sound, it is the party’s responsibility to make people understand THEM; make the people feel the difference; give them enough incentive to break free from their ritualized choices so they choose THEM and reject their respective incumbents. Confused? Yes. It is confusing and PTI is paying the price of this confusion.

Politics – especially in developing countries with high illiteracy and low political awareness – is not a science, with definite rules & equations that hold in any & all situations.
Instead, in countries like ours, politics is an art; where things are not measured based on RIGHT or WRONG, but on the basis of PRACTICAL and IMPRACTICAL.

In Pakistani-style politics, roughly five things matter most:

1) Card……. 2) Backing…….. 3) Party Organization……… 4) Attractive Rhetoric……. 5) Maneuvering

Any successful political franchise needs AT LEAST TWO of these under its belt (more than 2 are a bonus). How? Think of the various political parties and see which has what under its belt (ab sara kaam me hi karoon? Aap loog bethay rotiyan tortay raho?)

Coming back…. let us assess PTI on these 5 criteria and see the havoc it has played with itself over the past many years:
1) Card. 
PTI has no ‘card’ to cash on. All available cards in the market (Sindhi / Punjabi / Baloch / Pukhtoon / Mohajir / Muslim / Shia / Sunni) have been taken already by various parties.
2) Backing.
Successful political ventures need to have backing of at least some ‘powerful players’ (Allah, America, Army, Arabs, Business class or Militant wing). While Allah prefers to be generally neutral in Pakistani politics, PTI doesn’t seem to be in good books of America, Arabs and Businessmen and it has no militant wing either. While some may argue that army favours it, there is little evidence of any tangible ‘institutional’ support for PTI from the army.
3) Party Organization.
One word: Obsolete. On a provincial model that makes little sense; highly inefficient, divisive and thus counterproductive.
4) Attractive Rhetoric.
In PTI’s case it is either terrible (at worst) or at least missing (at best).RIGGING has been PTI’s narrative since 2013 and it takes no rocket scientist to tell you that while the public may agree with PTI’s point of view on the issue, the narrative has become boring to death (for the public). Someone has to tell Imran Khan that every time he utters the word rigging, he loses a supporter or two OR a couple of prospective supporters are repulsed. No, not because people think Imran Khan is not speaking the truth about rigging. But because people have realized the futility of insisting on this narrative and refusing to move on. It’s like a sweet melody on ‘repeat mode’ on a CD player; becoming boring and in due course, repulsive. Khan Saab: You get it?
And while TABDEELI may sound like an ‘attractive rhetoric’ to hold on to, it is not. Not per se, but because it entails something that exposes the US more than the THEM, especially when the party has become a cocktail of fresh & old vines in the same flask (errrrrr).
5) Maneuvering.
Imran Khan is simply not made for that. Sorry :(
.
To be continued

.
.
The writer is a tribesman from Bajaur Agency (FATA) and tweets at @ZalmayX .
(No official association with PTI)

.
....................

Disclaimer: This blog is not an official PTI webpage and is run by a group of volunteers having no official position in PTI. All posts are personal opinions of the bloggers and should, in no way, be taken as official PTI word.
With Regards,
"Pakistan Tehreek-e-Insaf FATA Volunteers" Team.


Saturday, July 25, 2015

Saboot Lao - A Saga of (In)Justice

By: Shah Zalmay Khan
.

ثبوت لاؤ

تحریر: شازلمےخان
کردار: نواز، عمران، آصف  وغیرہ (امتحانی امیدوار)، فخرالدین صاحب (پبلک سروس کمیشن کے چئیرمین)، افتخار صاحب (امتحانی چیکر)،  نجم صاحب(امتحان ہال سپرنٹنڈنٹ)، شکیل ( چپڑاسی) سمیت کئی افراد پر مشتمل امتحانی عملہ،راؤ صاحب (ممتحن)، نادرہ (امتحان ہال میں کیمروں کی نگران)، ناصر صاحب (جج)۔
نوٹ: راؤ کو "آر او" اور نادرہ کو "نادرا" اپنے رسک پر  ہی سمجھیں۔ زلمے اس کا ذمہ دار نہیں۔
۔
منظر نمبر 1: پبلک سروس کمیشن کے زیراہتمام ایک اعلی سرکاری عہدے کیلئے جاری امتحان  کے ہال کا منظر۔
مئی کا مہینہ ہے اور سخت گرمی کا دن ہے۔ تاریخ ہے غالباٌ 11 مئی 2013۔ پرچہ کافی سخت ہے اور  سب امیدوار بار بار ماتھے پرآیا پسینہ پونچھ رہے ہیں۔ نجم اور ان کا باقی امتحانی عملہ ہال کے چکر لگارہے ہیں۔ تقریباٌ ہاف ٹائم ہوچکا ہے۔ اچانک نواز اشارے سے چپڑاسی شکیل کو بلاتا ہے اور اس کے کان میں کچھ کہتا ہے۔ چپڑاسی شکیل اپنا موبائل اٹھا کر چیکر افتخار کو کال ملاتا ہے۔ تھوڑی دیر بعد شکیل ہال کا دروازہ کھولتا ہے اور چیکر افتخار اندر آجاتا ہے۔کچھ دیر ہال میں گھوم پھر کے افتخار نواز کے پاس آتا ہے۔ نواز اسے دھیمی آواز میں بتاتا ہے کہ 5 میں سے 3 سوال تو جیسے تیسے کرکے ہوگئے ہیں لیکن باقی 2 کی بالکل سمجھ نہیں آرہی۔ افتخار نجم کے پاس جاکر اسے نواز کیلئے کوئی "بندوبست" کرنے کا کہتا ہے۔  نجم اسے کہتا ہے کہ ایسا نہ ہو چئیرمین فخرالدین کو بھنک پڑ جائے تو مسلہ نہ ہوجائے۔ افتخار اسے کہتا ہے کہ فخرالدین کی فکر نہ کرو، وہ بوڑھا اور ذہنی لحاظ سےکمزور بندہ ہے جسے صبح شام کا صحیح پتہ نہیں چلتا۔ اور ویسے بھی کمیشن کے عملے میں ہمارے بندے موجود ہیں، کوئی مسلہ نہیں ہوگا۔ نجم کو یہ سن کر تسلی ہوتی ہے اور وہ اپنے امتحانی عملے کے رکن راؤ کو بلاکر اسے سمجھاتا ہے۔ راؤ نواز کے پاس آکر چپکے سے کہتا ہے کہ پرچہ مجھے دے کر خاموشی سے ہال سے چلے جاؤ، باقی میں سنبھال لوں گا۔ نواز پرچہ اس کے حوالے کرکے نکل جاتا ہے اورراؤ اس کا پرچہ لے کر ایک کونے میں بیٹھ کر حل کرنے لگتا ہے۔ ادھر عمران نواز کو ہاف ٹائم پر ہی ہال سے نکلتے دیکھ کر حیران رہ جاتا ہے کہ نواز اتنا لائق تو نہیں کہ اتنا مشکل پرچہ ہاف ٹائم سے پہلے ہی مکمل کرلے۔ بہرحال وہ کندھے اچکا کے اپنے پرچے میں مصروف ہوجاتا ہے اور3 سوالات کے بہترین جوابات لکھ دیتا ہے، 1 سوال کا تسلی بخش جواب لکھتا ہے البتہ 1 سوال تھوڑا گزارے لائق لکھتا ہے۔ پرچے کا وقت پورا ہونے پر سب امیدوار اپنے پرچے امتحانی عملے کے حوالے کرکے نکل آتے ہیں۔
۔
 منظر نمبر2: پبلک سروس کمیشن کے دفتر کا مارکنگ روم (پرچوں کی  چیکنگ والاکمرہ) کا منظر۔
پرچوں کی مارکنگ جاری ہے ۔ نواز کا پرچہ سامنے آتا ہے تو ممتحن راؤ سیدھانجم اورافتخار کی طرف دیکھتا ہے۔وہ اسے اشارہ کرتے ہیں کہ کسی بھی طرح "بھاری نمبروں" سے پاس کرواؤ۔ چنانچہ راؤ اس کے غلط کیے گئے سوالوں کو بھی ٹھیک کردیتا ہے اور جو آخری دو سوال خود اسی (راؤ) نےنواز کے پرچے میں لکھے ہوتے ہیں وہ تو ظاہر ہے ٹھیک ہی تھے۔یوں نواز کا اے گریڈ آ جاتا ہے۔ جب عمران کا پرچہ راؤ چیک کرتا ہے تو اس کے نمبر بھی اے گریڈ بنتے ہیں اور نواز سے ایک نمبر زیادہ بن جاتا ہے۔اب جب نتائج فائنل ہورہے ہوتے ہیں تو میرٹ لسٹ میں عمران کا نام سب سے اوپر اور نواز  امتحانی عملے کی تمام تر کوششوں کے بعد بھی دوسرے نمبر پر۔یہ دیکھ کر افتخار اور نجم ممتحن کو ہدایت کرتے ہیں کہ عمران کا پرچہ دوبارہ نکالو اور کسی بھی طرح اس کے کچھ نمبر کاٹ کے اسے اےگریڈ سے نیچے لے آؤ۔راؤعمران کے پرچے کے اوپر کٹنگ کرکے اس کے نمبر نواز سے کافی کم کردیتا ہے۔یوں نئی میرٹ لسٹ جو بنتی ہے اس میں نواز سب سے اوپر اور عمران  نیچے چلا جاتا ہے۔
۔
منظر نمبر3: پبلک سروس کمیشن کے دفتر کا میڈیا روم(چئیرمین فخرالدین کی پریس کانفرنس)۔
چئیرمین فخرالدین نتیجے کا اعلان کرتے ہوئے کہتا ہے کہ اعلی عہدے کا امتحان نواز نے ٹاپ کرلیا ہے اور یوں عہدہ اسے مل گیا ہے۔ وہ شفاف اور آزادانہ امتحانات پر خود کو خراج تحسین پیش کرتا ہےاور ساتھ ہی امتحانی عملے،ممتحن، نجم اور افتخار وغیرہ کا بھی شکریہ ادا کرتا ہے۔(نوٹ: نواز کو ملنے والا عہدہ ایسا ہے کہ پبلک سروس کمیشن کا ادارہ  اس کا ماتحت ہے)۔
۔
منظر نمبر4: افتخار کا گھر(اس کے بیٹے ارسلان کو نواز کی طرف سے کروڑوں کا  معدنی ٹھیکہ ملنے کی خوشی میں شاندار پارٹی)۔
۔
منظر نمبر 5: نجم کا گھر (نجم کو نواز کی طرف سے سپورٹس کا کروڑوں کا ٹھیکہ ملنے کی خوشی میں  شاندارپارٹی)۔
۔
منظر نمبر 6: نواز کا گھر (اعلی عہدہ ملنے کی خوشی میں شاندار پارٹی جس میں افتخار، نجم، ممتحن وغیرہ سب موجود)۔
۔
منظر نمبر 7: عمران کا گھر۔
عمران امتحانی نتیجے پر حیران و پریشان ہے۔ صرف وہی نہیں بلکہ وہ سب لوگ بھی جو عمران کی اس امتحان کیلئے کی گئی کڑی محنت کے گواہ تھے۔ عمران کو یقین نہیں آرہا تھا کہ اتنا مشکل پرچہ، جس کے ہاف ٹائم سے پہلے ہی نواز ہال سے نکل گیا، وہ اس نے ٹاپ کیسے کرلیا؟ اسے یہ بھی حیرت تھی کہ اس کےاپنے پرچے میں تو 3 سوال بہترین تھے، 1 تسلی بخش تھا اور صرف 1 سوال میں نمبر کٹنے کی گنجائش تھی۔ اس لحاظ سے اس کا کم ازکم اے گریڈ تو آنا چاہئیے تھا (بلکہ شاید اےون ہی بن جاتا) لیکن نتائج میں اس کے نمبر بی گریڈ بنے۔اس نے سوچا کہ وہ پبلک سروس کمیشن میں اپیل کرے گااس نتیجے کے خلاف۔
منظر نمبر 8: پبلک سروس کمیشن میں عمران کی اپیل پر کارووائی کا منظر۔
چئیرمین فخرالدین حیرت سے افتخار ،نجم اور راؤ سے پوچھتا ہے کہ عمران نے امتحانی نتیجے کے خلاف اپیل کیوں کی ہے؟ امتحان اور نتیجہ تو بڑا صاف و شفاف نہیں تھا؟ افتخار، نجم اور راؤ اسے یقین دلاتے ہیں کہ "فخرو" صاحب، امتحان بالکل شفاف تھا۔ آپ ٹینشن نہ لیں۔ فخرو کہتا ہے ٹھیک ہے بھائی لیکن میں نےبڑھاپے میں اس امتحان کے انعقاد سے اپنا فرض پورا کردیا، اب میں ریٹائر ہونا چاہتا ہوں۔یہ سن کر افتخار، نجم اور راؤ اسے خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ فخرو عمران کی اپیل پر "این ایف اے" (نو فردر ایکشن) لکھ کر واپس کردیتا ہے۔
۔
منظر نمبر 9:
عمران کو پبلک سروس کمیشن کی طرف سے اس کی اپیل پر "این ایف اے" کا جواب مل جاتا ہے۔اس کے بعد عمران امتحان میں ہونے والی زیادتی کی ذاتی طور پر تحقیق کرواتا ہے تو اس پر حیرتناک انکشاف ہوتاہےکہ امتحان سے پہلے ہی  نواز نے چیکر افتخار، سپرنٹنڈنٹ نجم، ممتحن راؤ اور چپڑاسی شکیل کو ساتھ ملایا ہوا تھا۔اسے پتہ چلتا ہے کہ نواز نے تو پرچہ ادھورا چھوڑ دیا تھا جو کہ راؤ نے حل کردیا۔اور اس "خدمت" کے بدلے نواز نےعہدہ ملنے کے بعد ان سب لوگوں کو ایک ایک کرکے "نواز" دیا۔عمران کو اب یقین ہوجاتا ہے کہ اس کے اپنے پرچے میں بھی ان لوگوں نے کوئی "دھاندلی" کی ہوگی ورنہ اتنے اچھے پرچے پر بی گریڈ آنا ممکن نہیں۔ وہ فیصلہ کرتا ہے کہ وہ پبلک سروس کمیشن میں دوبارہ اپیل کرےگا۔
۔
 منظر نمبر 10:
 عمران کی اپیل پر اسےپبلک سروس کمیشن میں بلا لیاجاتا ہے۔ وہ اپنا پرچہ دیکھنے کی خواہش ظاہر کرتا ہے۔ تھوڑی مین میخ کے بعد اسے پرچہ دکھا دیا جاتا ہے تو وہ پرچے میں ہونے والی کٹنگ اور قصداٌ غلط کیے گئے سوالات دیکھ کر دنگ رہ جاتا ہے۔وہ اس کا سبب پوچھتا ہے تو افتخار اور راؤ اسے "شرمناک" جواب دیتے ہیں کہ پرچے چیک کرنا ممتحن کا کام ہے۔ وہ جس سوال کے جتنے نمبر دینا چاہے، اس سے کوئی نہیں پوچھ سکتا۔عمران ان سے بحث کرنے لگتا ہے تو وہ اسے کہتے ہیں کہ اب کچھ نہیں ہوسکتا۔  اب تو نواز کو عہدہ مل چکا ہے۔ صبر کرو اور اگلے امتحان کا انتظار کرو۔
۔
منظر نمبر 11: نواز کے دفتر کے باہر کا  منظر۔
 عمران امتحانی "دھاندلی" کے خلاف نواز کے دفترکے سامنے احتجاج کیلئے پہنچ جاتا ہے۔ اس کے ساتھ اس کے دوست احباب بھی شامل ہوتے ہیں۔ احتجاج کئی دن تک جاری رہتا ہے۔ روز بہت سے عام لوگ عمران کی کہانی سن کر اس کے احتجاج میں اس کیساتھ شامل ہوتے ہیں۔ تقریباٌ 126 دن کے احتجاج کے بعد نواز عمران کو عدالتی کمیشن سے اس پورے معاملے کی انکوائری کی آفر کرتا ہے۔عمران یہ آفر مان لیتا ہے کیونکہ عدالتی کمیشن کےجج ناصر سے اسے انصاف کی امید ہوتی ہے۔
۔
منظر نمبر 12: جج ناصر کے زیرسربراہی عدالتی کمیشن کے اجلاس کا منظر۔
عمران جج ناصر کے سامنے اپنے دلائل پیش کرتا ہے تو جج اسے کہتا ہے "ثبوت لاؤ" کہ تمہارے ساتھ ناانصافی ہوئی ہے۔ عمران  کہتا ہے جناب والا امتحان ہال میں کیمرے لگے ہوئے تھے جن کی انچارج نادرہ تھی۔ نادرہ کو بلا کر اس سے امتحان ہال کی ویڈیو ٹیپ منگوائی جائے تو دودھ کا دودھ پانی کا پانی ہوجائے گا۔ جج نادرہ کو بلواتا ہے اور ٹیپ کمرہ عدالت میں چلائی جاتی ہے۔ ٹیپ سے پتہ چلتا ہے کہ نواز ہاف ٹائم سے پہلے ہی پرچہ راؤ کے حوالے کرکے نکل گیا اور راؤ اس کا پرچہ لے کر کچھ لکھتا رہا۔ عمران کہتا ہے: "دیکھا جناب عالی، یہ رہا ثبوت"۔ جج ناصر نے اپنی عینک سیدھی کی اورکہا: "لیکن اس سے یہ کیسے ثابت ہوا کہ ناانصافی ہوئی؟ ہوسکتا ہے نواز کو پورا پرچہ آتا ہو اور اس نے ہاف ٹائم سے پہلے ہی حل کرلیا ہو"۔ جج نے نواز سے پوچھا کہ کیا اس نے پرچہ پورا حل کیا تھا؟ نواز بولا: "جی یور آنر۔ میں نے تو پورا پرچہ حل کرلیا تھا"۔ عمران بولا : "یور آنر اگر نوازنے پرچہ حل کرلیا تھا  تو آخر راؤ اس کا پرچہ لے کر اس پر ایک گھنٹہ کیا لکھتا رہا؟  پرچہ قواعد و ضوابط کے مطابق فوراٌ جوابی پرچوں والے لفافے میں کیوں نہیں ڈالا"؟  یہ  سن کر جج ناصر سر ہلاتا ہے اور کہتا ہے کہ مزید "ثبوت لاؤ"۔ یہ سن کر  عمران  درخواست کرتا ہے کہ پبلک سروس کمیشن سے اس کا پرچہ منگوایا جائے جس میں بلاوجہ کٹنگ کرکے اس کے نمبر کم کیے گئے۔ پرچہ پیش کیا جاتا ہے اور اس سے پتہ چلتا ہے کہ واقعی 2 سوالوں کے نمبر پہلے زیادہ لکھ کر بعد میں کاٹے گئے ہیں اور کم نمبر دیے گئے جس سے پرچہ اے گریڈ سے بی میں آگیا۔ اس کے بعد جج ناصر کمیشن کی کارووائی اگلی پیشی تک ملتوی کردیتا ہے۔
۔
منظر نمبر 13: جج ناصر کے زیرسربراہی عدالتی کمیشن کے اجلاس کی اگلی پیشی کا منظر۔
جج ناصر  پھر عمران سے کہتا ہے کوئی اور "ثبوت لاؤ"۔ عمران اس سے کہتا ہے نواز کا پرچہ عدالت میں پیش کیا جائے تو مزید ثبوت مل جائے گا۔ نواز کا پرچہ عدالت میں پیش کیا جاتا ہے تو عمران بتاتا ہے: :"دیکھئے یور آنر۔ کس طرح نواز کے لکھے ہوئے کمزور جوابات پر بھی اس کو پورے نمبر دیے گئے ہیں۔ جبکہ اسی سوال کے نواز والے جواب کا موازنہ میرے جواب سے کیا جائے تو وہ کہیں بہتر نکلےگا پھر بھی میرے نمبر کاٹے گئے"۔ یہ سن کر راؤ بول پڑتا ہے:" آبجیکشن یورآنر ۔قواعدوضوابط کے مطابق پرچوں کی چیکنگ ممتحن کا کام ہے اور وہ جس سوال پر جتنے نمبر دے دے، اس کو چیلنج نہیں کیا جاسکتا"۔ جج ناصر بولا"ہاں قانون تو یہی ہے۔ آبجیکشن سسٹینڈ"۔ یہ سن کر عمران مایوس ہونے لگتا ہے۔ اچانک نواز کے پرچے کے مختلف جوابات کو دیکھتے ہوئے وہ ایک چیز نوٹ کرتا ہے اور اس کی آنکھوں میں چمک آجاتی ہے۔ وہ چلاتا ہے: "اوئے یور آنر۔پرچہ غور سے پڑھییے۔اس میں پہلے 3 سوالات کی ہینڈ رائیٹنگ کچھ اور ہے اور باقی 2 سوالات کی ہینڈرائیٹنگ کچھ اور ہے۔ آپ ابھی نواز اور راؤ کی تحریر سے اس کا موازنہ کریں تو پتہ چلےگا کہ پہلے 3 سوال نواز نے لکھے اور باقی 2 راؤ نے"۔ یہ سن کر نواز اور راؤ دونوں غصے میں چیخنے لگتے ہیں اور کہتے ہیں عمران بلاوجہ ہم "شریف" لوگوں پر الزامات لگارہا ہے۔ جج ناصر سوالات کی ہینڈ رائیٹنگ کا موازنہ کرتا ہے اور تفہیمی انداز میں سر ہلاتا ہے۔ اتنے میں عدالت کا اردلی گھنٹی بجاتا ہےاورجج ناصر کمیشن کی کارووائی اگلی پیشی تک ملتوی کردیتا ہے۔
۔
منظر نمبر 14: جج ناصر کے زیرسربراہی عدالتی کمیشن کے اجلاس کی اگلی پیشی کا منظر۔
جج ناصر  عمران سے کہتا ہے :" ہاں تو عمران صاب، کب لارہے ہیں آپ ثبوت"؟ عمران بتاتا ہے کہ پرچوں کے حوالے سے کافی ثبوت تو وہ پچھلی پیشیوں میں دے چکا ہے اور اب کچھ واقعاتی شہادتیں پیش کرنا چاہتا ہے۔ جج ناصر اجازت دے دیتا ہے۔ عمران کہتا ہے: " یور آنر، نواز نے عہدہ ملنے کے چند دن کے اندر اندر سپرنٹنڈنٹ نجم کو کروڑوں روپے کا سپورٹس کا ٹھیکہ دلوایا حالانکہ نجم کی 7 پشتوں میں کسی کا کبھی سپورٹس سے واسطہ نہیں رہا۔ دوسری طرف چیکر افتخار کے بیٹے ارسلان کو کروڑوں روپے کا معدنی ٹھیکہ دیا حالانکہ وہ پیشے کے لحاظ سے ڈاکٹر ہے اور اس کا معدنیات سے دورپار کا بھی واسطہ نہیں۔ اس کے علاوہ  نواز نے ممتحن راؤ کو بھی نوازا اور چپڑاسی شکیل کو بھی ایک اخبار کی ایجنسی دلوا دی ہے۔ آخر یہ سب نوازشیں ان سب پر کیوں ہوئیں اچانک؟ اس سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ سب نواز کیساتھ ملے ہوئے تھے"۔ یہ سن کر جج ناصر نجم، افتخار، شکیل وغیرہ سے پوچھتا ہے کہ کیا واقعی ان کو یہ ٹھیکے وغیرہ ملے ہیں؟ انہوں نے سر جھکا کر اقرار کیا لیکن اتنے میں نواز بول پڑا: "یور آنر، ان ٹھیکوں کا امتحان میں میری مدد سے کوئی تعلق نہیں۔ دراصل  میں ان صاحبان کے اچھے اخلاق سے اتنا متاثر ہوا کہ میں نے ان کو یہ ٹھیکے دےدیے۔ قسم سے"۔ جج ناصر نے اپنے پاس کچھ نوٹ کیا اور اعلان کیا کہ  سماعت ختم ہوگئی ہے۔ اب کمیشن اپنی رپورٹ تیار کرےگا۔
۔
منظر نمبر 15:
 جج ناصر عدالتی کمیشن کی رپورٹ  اسی نواز کو بھجواتا ہے جس پر "ان فئیر مینز" استعمال کرنے پر عمران نے دعویٰ کیا ہوا تھا۔ نواز اس رپورٹ کے کچھ حصے چپڑاسی شکیل کے حوالے کرتا ہے اور اسے کہتا ہے کہ شہر میں مختلف چوکوں پر اعلان کروائے کہ  عدالت نے نواز کے حق میں فیصلہ دے دیا اور یہ کہ  عمران کا دعویٰ باطل ثابت ہوا اس لئے اب وہ  نجم، افتخار، نواز اور ان لوگوں سے معافی مانگے جو اس کی بات مان کر احتجاج کیلئے نکلے تھے۔ شکیل چند ڈھولچیوں صافی، مظہر، حامد،  چیمہ، ارشد،منصور، مس شیرازی وغیرہ کو لے کر شہر کے مختلف چوکوں پر ناچ ناچ کر یہ بات نشر کرنا شروع کردیتا ہے کہ : "عمران کا الزام غلط ثابت ہوا، عدالت نے نواز کے اعلی عہدے پر تقرری کو جائز قرار دیا، امتحان میں کوئی ان فئیر مینز استعمال نہیں ہوئے ، عمران اب معافی مانگے وغیرہ وغیرہ"۔
۔
منظر نمبر 16:
 عمران کو عدالت کی سماعت اور کارووائی سے پوری امید تھی کہ جتنے کچھ ثبوت وہ جج ناصر کے سامنے پیش کرچکا ہے، ان سے کیس کا فیصلہ اس کے حق میں ہوگا۔ لیکن عدالتی فیصلے کی رپورٹ دیکھ کر اس کے ہوش اڑ گئے۔ عدالت کے فیصلے کے چیدہ چیدہ نکات یہ تھے:
1) اگرچہ نواز کمرہ امتحان سے ہاف ٹائم سے پہلے نکل گیا تھا لیکن اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ اس نے پرچہ مکمل حل نہیں کیا تھا۔ یہ تو صرف "بےقاعدگی" تھی۔
2) اگرچہ ہال کی ویڈیو کے مطابق راؤ اس کے پرچے پر گھنٹے تک کچھ  لکھتا رہا لیکن اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ وہ اس کیلئے جوابات لکھ رہا تھا۔ یہ تو صرف بےقاعدگی تھی۔
3) اگرچہ راؤ نے قواعد کے مطابق فوراٌ نواز کا پرچہ لفافے میں نہیں ڈالا لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ وہ اس کا پرچہ حل کررہا تھا۔ یہ تو صرف بےقاعدگی تھی۔
4) اگرچہ  عمران کے پرچے  میں بلاوجہ صحیح جوابات کو کاٹا گیا تھا اور نمبر کم لگائے گئے تھے لیکن یہ ناانصافی نہیں تھی۔ یہ تو صرف بےقاعدگی تھی۔
5) اگرچہ نواز کے پرچے پر غلط سوالات کو بھی پورے نمبر دیے گئے تھے لیکن یہ ناانصافی نہیں تھی۔ یہ تو صرف بےقاعدگی تھی۔
6) اگرچہ نواز کے پرچے میں 3 سوالات کی ہینڈرائیٹنگ باقی 2 سوالات کی ہینڈ رائیٹنگ سے قطعی مختلف تھی لیکن اس کا کوئی ثبوت نہیں کہ باقی 2 سوال نواز نے خود نہیں لکھے بلکہ راؤ نے لکھے۔
7) اگرچہ نواز نے عہدہ ملنے کے فوراٌ بعد چیکر افتخار کے بیٹے کو بغیر کسی تجربے کروڑوں کا معدنی ٹھیکہ دیا اور سپرنٹنڈنٹ نجم کو بغیر کسی تجربے کے سپورٹس کا ٹھیکہ دیا لیکن اس سے ان کی آپس میں ملی بھگت کا کوئی ثبوت نہیں ملتا۔ یہ تو نواز کی خداترسی اور دریادلی تھی کہ ان کے اچھے اخلاق سے متاثر ہوکر اس نے ان کیلئے روزگار کاپکا بندوبست کیا۔
8) ان سب حقائق کے مدنظر عدالت اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ اگرچہ اس امتحان میں کچھ "بےقاعدگیاں" ہوئی ہیں لیکن مجموعی طور پر یہ امتحان  بالکل صاف و شفاف منعقد ہوا اور یہ اعلیٰ عہدہ  اصل حقدار یعنی نواز کو جائز طور پر مل گیا۔ عدالت عمران کو تاکید کرتی ہے کہ وہ  لوگوں کا وقت ضائع کرنے پر اور بلاوجہ ناانصافی اور "دھاندلی" کے الزامات لگانے پر سب متعلقہ افراد سے معافی مانگے۔
۔

 منظر نمبر 17:
 عمران کے گھر کا منظر جہاں عمران عدالتی فیصلے کی کاپی لے کر حیران پریشان موجود ہے۔ اس کے کچھ دوست بھی موجود ہیں۔ گھر کے باہر نواز کے حامیوں اور شکیل کے جمع کیے ہوئے ڈھولچیوں کا جمگھٹا لگا ہوا ہے۔ ساتھ ہی  فضل نامی مولوی، اسفندیار نامی ٹھیکیدار، الطاف نامی بھتہ خور ٹارگٹ کلر بھی موجود ہیں۔ وہ سب بیک آواز عمران سے ایک ہی مطالبہ کرتے ہیں: "ماپی مانگے گا۔ اب تو ماپی مانگے گا۔ ماپی تو مانگنا پڑے گا"۔
 عمران کے گھر کے باہر اس قسم کے نعرے لگانے والوں کا ہجوم بڑھتا جاتا ہے اور ایک ایک کرکے اس کے ساتھ کھڑے لوگ بہانے بہانے سے باہر نکل کرکے اسی ہجوم کا حصہ بنتے جاتے ہیں۔ عمران حیران و پریشان کبھی ادھر دیکھتا ہے کبھی ادھر اور۔۔۔۔۔۔۔ کبھی آسمان کی طرف۔ وہ سوچتا ہے کہ کیا واقعی یہ شہر اتنا اندھا ہوگیا ہے کہ اس کو سچ اور جھوٹ میں فرق نظر نہیں آتا؟ کیا انصاف یوں بھی بکتا ہے؟ کیا واقعی یہاں حق بات کیلئے لڑنے کی سزا یہ ہے کہ آپ کو شودر بنا دیاجائے؟
۔
منظر نمبر 18:
 زلمے کا کمرہ جہاں وہ کمپیوٹر پر بیٹھ کر یہ کہانی  نما ڈرامہ یا ڈرامہ نما کہانی لکھ رہا ہے۔ پتہ نہیں کیوں بار بار اس کی آنکھوں میں پانی آجاتا ہے۔ شاید موسم کا اثر ہے، حبس بھی تو بہت ہے نا آج کل۔ پورے شہر پر مایوسی، جرم، بےبرکتی، ناانصافی، ضمیرفروشی  کا حبس جو طاری ہے۔ یوں لگتا ہے "گوتھم سٹی" ہو جہاں ہر طرف "بین" اور اس کے گماشتوں کا راج ہے۔ اور بیٹ مین کو سب  جرائم پیشہ مل کر نیچا دکھا رہے ہیں (انصاف دینے والوں کو ملا کر)۔ اس کو بدنام کرکےمایوس کرنا چاہتے ہیں۔ گوتھم سٹی کے غریب لوگوں کو اس سے مایوس کرنا چاہتے ہیں۔ تاکہ اس کے راستے سے ہٹنے کے بعد وہ شہر والوں کیساتھ جو کرنا چاہتے ہیں، کھل کر کرسکیں۔
لیکن سوال یہ ہے کہ کیا بیٹ مین مایوس ہوگا؟
بیٹ مین کا تو پتہ نہیں۔ لیکن زلمے۔۔۔۔۔ کل بھی بیٹ مین کے ساتھ تھا، آج بھی ہے، اور آنے والے کل بھی۔۔۔۔ انشاءاللہ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The writer is a tribesman who tweets at @ZalmayX
(No official association with PTI)
....................

Disclaimer: This blog is not an official PTI webpage and is run by a group of volunteers having no official position in PTI. All posts are personal opinions of the bloggers and should, in no way, be taken as official PTI word.
With Regards,
"Pakistan Tehreek-e-Insaf FATA Volunteers" Team.


Sunday, November 2, 2014

Kafir Kafir - Shia Sunni Sab Hee Kafir

By: Shah Zalmay Khan
.

Note: I wrote this blog 2 years ago for another website but is still relevant, hence reproduced here.
.
کافر کافر۔۔۔ سب ہی کافر
کافر کافر، شیعہ کافر۔۔۔ یہ جملہ میں نے پہلی بار شاید چھ یا سات سال کی عمر میں اپنے علاقے کی مسجد میں  سنا تھا۔ یہ جملہ کہنے والا  مجھ سے تین چار سال بڑا ایک بچہ تھا جو اسی مسجد سے منسلک مدرسے کا "طالب" تھا۔ میں نے اس سے پوچھا کہ شیعہ کون ہوتےہیں اور کہاں پائے جاتے ہیں۔(یاد رہے میرا علاقہ باجوڑ ایجنسی مکمل طور پر سنی دیوبندی مسلک والوں کا علاقہ ہے)۔ طالب نے کہا کہ میں نے خود تو نہیں دیکھا لیکن مولوی صاحب بتاتے ہیں کہ وہ  کافر ہیں کیونکہ  قرآن کو پورا نہیں مانتے، حضرت محمد ﷺ کی رسالت میں شک کرتے ہیں اور حضرت علی کے علاوہ کسی صحابی کی عزت نہیں کرتے  بلکہ گالیاں دیتے ہیں۔ بڑے ظالم بھی ہوتے ہیں کیونکہ وہ محرم کےمہینے میں لوگوں کو چاقووں اور زنجیروں سے مارتے ہیں۔ اتنی چھوٹی عمر میں ظاہر ہے مذہب کے بارے میں میری اپنی معلومات بہت کم تھیں لیکن کم از کم حضرت محمد ﷺ پر جانثاری تو شاید ہر مسلمان کی گھٹی میں ہوتی ہے اس لیے میری آنکھوں میں بھی جیسے خون اتر آیا اور "شیعہ" کا ایک امیج میرے ذہن میں بن گیا جو سراسر منفی تھا۔
 کچھ عرصے بعدہمارے  بالکل ساتھ والے گھر  میں ایف سی کے ایک نائب صوبیدار صاحب اپنی فیملی کے ساتھ شفٹ ہوئے جن کا تعلق پارہ چنار سے تھا اور شیعہ مسلک سے تھے۔ چند دن تک میں ان انکل،  بھابھی اور ان کے بچوں سے کھنچا کھنچا سا رہا اور طالب کی بتائی ہوئی باتیں یاد آتیں تو ان لوگوں پر غصہ آنے لگتا۔ وہ لوگ تقریباٌ دو سال ہمارے پڑوس میں رہے اور وقت کے ساتھ ان کے بارے میں میرا رویہ نارمل ہونے لگا کیونکہ مجھے پتہ چل گیا کہ طالب کی بتائی ہوئی باتیں یا تو مکمل غلط تھیں یا سیاق و سباق سے ہٹ کر تھیں۔ پھرتعلیم  کے سلسلے میں ماسٹرز تک  بارہ تیرہ سال باجوڑ سے باہر ہاسٹلوں میں رہا جہاں  میرے کئی  شیعہ دوست بنے اور  روم میٹ یا سائیڈ میٹ بھی رہے۔ان کی معیت میں مجھے اندازہ ہوا کہ شیعہ سنی میں فقہی لحاظ سے کچھ اختلافات بے شک ہیں لیکن جو باتیں ہم نے سنی تھیں وہ ٹھیک نہیں تھیں اور ان میں سے زیادہ تریا تو  غلط فہمیوں پر مبنی تھیں یا کچھ فرقہ پرستی کی دکانیں چلانے والے نام نہاد علماء کی گھڑی ہوئی باتیں ہیں ۔ انہی شیعہ دوستوں سے یہ بھی پتہ چلا کہ کیسے ان کے کچھ انتہا پسند ملا اور ذاکر حضرات ان کو سنیوں کے بارے میں  غلط معلومات دیتے ہیں اور سنیوں کو حضرات اہل بیت اور حضرت علی کا دشمن بنا کر پیش کرتے ہیں۔
میں تو چلیں خوش قسمت رہا کہ ذاتی تجربے اور تحقیق سے اس نتیجے پر پہنچ گیا کہ یہ سب دکانداری کا کھیل ہے۔ لیکن ان کروڑوں  کا کیا جو جہالت کے اندھیرے میں بھٹکتے ہیں اور دکاندار مولویوں اور ذاکروں کی لگائی ہوئی فرقہ پرستی کی آگ کو روشنی سمجھتے ہیں؟ہے نا عجیب تماشہ؟ دونوں طرف کے دکاندار مولوی  اور ذاکراپنا فرقہ پرستی کا سودا بیچنے کیلئے ایک دوسرے سے خرافات منسوب کرتے ہیں اور دونوں فرقوں کے سادہ لوح  بلکہ جاہل پیروکارآنکھیں بند کرکے ان کی بات پر یقین کرلیتے ہیں اور کافر کافر کے نعرے بلند کرتے ہیں۔کسی کے پاس اہل بیت کا اجارہ ہے تو کوئی ناموس صحابہ کا ٹھیکیدار۔ کوئی "حق چار یار" کی مالا جپتا ہے تو کوئی "قائم آل محمد"کی تسبیح کرتا ہے۔کوئی سبز پگڑی پہن کر مزاروں سے کماتاہے تو کوئی کالا جبہ پہن کر مناظرے کرنے نکلتا ہے اور کوئی کالی پگڑی یا ٹوپی پہن کر سب کو سبق سکھانے کی ذمہ داری اٹھاتا ہے۔ 
اپنی دکانداری ہی سربلند رکھنے کیلئے یہ مسلک کے نام پر ایک دوسرے کو غیر ضروری طور پر محض چڑانے کیلئے  نئی سے نئی رسمیں، جلوس، کانفرنسیں اور مجلسیں نکالتے ہیں۔ پہلے محرم عام طور پر نو اور دس محرم  کی مجالس تک محدود رہتا تھا لیکن اب  شہ زوری دکھانے اور شناخت قائم رکھنے کیلئے  محرم کا پورا مہینہ ملک یرغمال بنا رہتا ہے۔گنجان آباد علاقوں میں مصروف سڑکوں پر راستے مجبوراٌ  بند کرنے پڑتے ہیں اور پولیس اور سیکیورٹی ادارے شعلہ بیان مولویوں اور ذاکرین کے چکر میں پڑے رہتے ہیں۔عوام ہیں کہ  کالے کپڑے پہن کربس  سر دھنتے ہیں اور ذاکرین پر دادوتحسین کے ڈونگرے برساتےہوئے سمجھتے ہیں کہ مسلمانی کا فرض ادا ہوگیا۔ سیکیورٹی ادارے کچھ بھی کہیں، کتنی بھی وارننگ دی جائیں  لیکن مرغی کی ٹانگ ایک تھی اور ایک ہی رہے گی۔ اب اگر شیعہ مولوی اور ذاکر محرم کے مہینے میں اپنی "تڑ" دکھا سکتے ہیں تو بھلا دیوبندی بریلوی کیوں پیچھے رہیں؟ صرف اہل تشیع  کو چڑانے کیلئے گلی گلی شہر شہر سیدنا فاروق اعظم کانفرنسیں ہورہی ہیں۔ کسی میں ہمت ہے تو  روک کر دکھائے۔ ناموس صحابہ کے "پروانے" جان کو آجائیں گے۔ولادت رسولﷺ کے سلسلے میں ربیع الاول میں چاردیواریوں میں ہونے والی میلادوں سے بات آگے بڑھ کر جلوسوں پر چلی گئ  جن کیلئے راستے بند ، ٹریفک معطل اور عوام کی زندگیاں سولی پر۔
سمجھ نہیں آتی کہ آخر اسلامی جمہوریہ پاکستان میں یہ سب لوگ کس کے سامنے اپنی مسلمانی ثابت کرنا چاہتے ہیں؟ کیاحضرت ابوبکر، حضرت عمر، حضرت عثمان یا حضرت علی ، حضرت حسن و حسین و بی بی زینب ہماری گواہی یا حمایت کے محتاج ہیں کہ ہم "حب اہلبیت" یا "ناموس صحابہ" کے نام پر ایک دوسرے کے گلے کاٹتے ہیں؟؟ 
کیا اماں عائشہ کو اپنی عصمت کے ثبوت کیلئے کسی خود کش حملہ آور کی گواہی کی ضرورت ہے جو جا کر امام بارگاہوں میں پھٹ کر سمجھتا ہے کہ حوریں "کنفرم" ہوگئیں؟ کیا سیدنا ابوبکرصدیق، سیدنا  فاروق اعظم، عثمان ذوالنورین اور شیر خدا حضرت  علی کرم اللہ وجہہ نعوذ باللہ اسی طرح ایک دوسرے کے خون کے پیاسے تھے جیسے آج ہم ان کے نام پر ایک دوسرے کے خون کے پیاسے ہیں؟ 
قدرت اللہ شہاب اسی بارے میں "شہاب نامہ" میں اپنی جھنگ کے ڈپٹی کمشنری کے دور کا  بیان کرتےہوئےمندرجہ ذیل  اظہار خیال کرتے ہیں۔پڑھئیے اور سر دھنیے۔
"لیڈروں کے طبقے میں سب سے مشکل پسند برادری ان رہنماؤں کی ہے جو سیاست کی جگہ خالص مذہبی پیشوائی پر گزارہ کرتےہیں۔ عید بقر عید کی طرح ان کا کاروبار بھی سال میں فقط ایک دوبار چمکتا ہے۔ خاص طور پر محرم کے دنوں میں ان کی کارگزاریاں بہت زور پکڑ لیتی ہیں۔ کہیں جلوس کے راستوں پر تنازعہ ہے، کہیں تعزیوں کی لمبائی پر تکرار ہے۔ کسی زمانے میں جب ہولی یا دسہرے کے جلوس مسجدوں کے آگے سے گزرتے تھے تو ہندووں اور مسلمانوں کے درمیان اچھا خاصا میدان کارزار گرم ہوجاتا تھا لیکن آزادی بھی ملی، ہندو بھی گئے۔ پھر بھی جلوسوں اور مساجد کا تصادم اسی گرم بازاری سے جاری ہے۔
ظہر کا وقت ہے۔ محرم کا جلوس نکلا ہوا ہے۔ سنیوں کی مسجد میں معمول سے زیادہ نمازی جمع ہیں۔ جلوس نے رفتارجان بوجھ کرسست کردی ہے تاکہ جب اذان کی آواز بلند ہو تو لپک کر مسجد کے عین سامنے پہنچا جائے۔ادھر مؤذن کو انتظار ہے کہ جلوس قریب آئے تو خدا کے بندوں کو نماز کیلئے پکارا جائے۔۔۔ باہر جلوس اور اندر جماعت دو مخالف فوجوں کی طرح صف آراء ہوجاتے ہیں۔ لیکن عین اس وقت اس علاقہ کا تھانیدار یا مجسٹریٹ دونوں فریقوں کو ترغیب دیتے ہیں کہ وہ اپنے اپنے نمائندے ڈپٹی کمشنر کے پاس بھیجیں۔فریقین کے پیشوا اپنے اپنے "وفود" لے کر بصد تزک و احتشام ڈپٹی کمشنر کے پاس آتے ہیں۔ اب اگر ڈپٹی کمشنر نے سال بھر سے ان رہنماؤں کے ساتھ مربیانہ خیر سگالی کے تعلقات استوار کررکھے ہیں تو بہت جلد مصالحت کے آسان آسان راستے نکل آتے ہیں۔ ورنہ اگر بدقسمتی سے "وفود"  میں سے کسی صاحب کا راشن ڈپو ان کی بدعنوانیوں کی وجہ سے منسوخ ہوچکا ہے، یا کسی صاحب کو ٹرک چلانے کا لائسنس نہیں ملا یا کسی صاحب کی دکان کی الاٹمنٹ معرض التواء میں ہے، یا کسی صاحب کے فرزند ارجمند کو ضلع کچہری میں ملازمت نہیں ملی تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک گاؤں میں اچانک خطرناک قسم کی کشیدگی نمودار ہوگئی۔ مسلہ متنازعہ یہ تھا کہ ایک مولوی صاحب کا فرمان تھا کہ  درودوسلام کے دوران "یا رسول اللہ" کہنا جائز ہی نہیں بلکہ باعث برکت بھی ہے۔دوسرے مولوی صاحب اسے ناجائز اور بدعت قراردیتے تھے۔ علماء کرام کے دائرے سے پھیلتی پھیلتی یہ بحث سارے گاؤں میں سرایت کرگئی۔ اس آڑ میں بہت سی ذاتی رنجشوں، رقابتوں اور مخاصمتوں نے بھی اپنا رنگ دکھایا اور رفتہ رفتہ گاؤں کے بہت سے لوگ آپس میں برسرپیکار ہوگئے۔ ایک دوسرے کے مویشی چرائے گئے۔ سرپھٹول ہوئی اور دیکھتے ہی دیکھتے  سارا گاؤں فساد اور بدامنی کے ایک مستقل چکر میں بری طرح پھنس گیا۔ آخر کار دونوں مولویوں کو گرفتار کرکے باہر بھیج دیا گیا اور جب پوری تفتیش کے بعد اس جھگڑے کا پہاڑ کھودا گیا تو اس میں سے سیاست کی ایک چھوٹی سی چوہیا برآمد ہوئی۔ (سارا فساد ایک سیاستدان نے عوام کو بےوقوف بنانے اور خود کو انتظامیہ کی نظروں میں اہمیت دلوانے کیلئے کروایا تھا کیونکہ انتظامیہ کو مجبوراٌ صورتحال کنٹرول کرنے کیلئے اس سیاستدان کو  بیچ میں ڈالنا پڑا)"۔
  شہاب نامہ ۔ از قدرت اللہ شہاب۔۔۔ باب: "اب مجھے رہبروں نے گھیرا ہے"۔
قدرت اللہ شہاب نے یہ سب ۱۹۵۰ کی دہائی  کے جھنگ کے حوالے سے لکھا تھا لیکن یہ باتیں آج بھی حقیقت ہیں۔ اپنے اردگرد دیکھیے کیا یہی کچھ نہیں ہورہا ہمارے ہر شہر اورقصبے  میں؟
کیا ہم عام شہری آنکھیں کھول کر نہیں دیکھ سکتے کہ کیسے جبہ و دستار کے پیچھے چھپے دکاندار ہمیں الو بنا کر اپنا الو سیدھا کررہے ہیں؟
میں علماء کے معیار علم کے مطابق شاید ایک جاہل ہوں کیوں کہ نہ تو میں نے درس نظامی کیا ہے، نہ ہی شہادت عالمیہ یا فقیہ کا کورس۔لیکن ایک سوال اپنے سنی مسلک کے فرقہ پرستی کے دکانداروں سے کرنا چاہوں گا کہ کیا آپ لوگ امام ابو حنیفہ، امام مالک، امام شافعی، امام احمد بن حنبل (اہلسنت کے چاروں امام) سے زیادہ بڑے فقیہ ہیں؟ جب ان چاروں میں سے کسی نے اہل تشیع کو کافر یا گستاخ صحابہ  نہیں قرار دیا تو اعظم طارق، حق نواز جھنگوی، اکرم لاہوری، ملک اسحاق وغیرہ کس شمار قطار میں ہیں کہ وہ کسی کو  کافر اور گستاخ صحابہ قرار دیتے پھریں؟
دوسرا سوال ان کروڑوں بھیڑ بکریوں سے ہے جو پاکستانی قوم کہلاتے ہیں اور سنی کافر، شیعہ کافر، بریلوی کافر، دیوبندی کافر کے نعرے مار کر سمجھتے ہیں کہ فرض مسلمانی ادا ہوگیا۔ جو متنازعہ مسائل پچھلے چودہ سو سال میں امام ابو حنیفہ، امام مالک، امام شافعی، امام احمد بن حنبل، امام جعفر صادق جیسے علماء حل نہ کرسکے، کیا آج ہم کلاشنکوف اور  خودکش بمبار کے زور پر ان کا حل نکال سکتے ہیں؟ اگر نہیں اور یقیناٌ نہیں تو ہم انسانوں کی طرح اس زریں اصول پر عمل کیوں نہیں کرسکتے کہ "اپنا مسلک چھوڑو مت، دوسرے کا مسلک چھیڑو مت"؟
۔
.
.
The writer is a tribesman from Bajaur Agency (FATA) and tweets at @ZalmayX . (No official association with PTI)
.

.....................

Disclaimer: This blog is not an official PTI webpage and is run by a group of volunteers having no official position in PTI. All posts are personal opinions of the bloggers and should, in no way, be taken as official PTI word.
With Regards,
"Pakistan Tehreek-e-Insaf FATA Volunteers" Team.


Saturday, August 9, 2014

Dil Kee Lagee - who knows Imran Khan?

By: Shah Zalmay Khan
.
 دل کی لگی
.
پاگل خان۔ ہٹلر خان۔ یوٹرن خان۔  زکوٰۃ خان۔کینسر خان۔  سونامی خان۔  یہودی خان۔  طالبان خان۔ اسٹیبلشمنٹ خان۔ یہ خان۔ وہ خان۔
کون ہے یہ بندہ جو اتنی ساری (آپس میں متضاد) برائیوں کا بیک وقت مجموعہ ہے؟ کیا کیا ظلم ڈھائے ہیں اس بندے نے اس ملک پر؟ ۶۵ سال میں اس ملک کا بیڑہ ہی غرق کردیا ہوگا جو اتنے مختلف  غلیظ ناموں سے پکارا جاتا ہے۔ 
اور کون ہیں اسے ان ناموں سے پکارنے والے؟ ملک و قوم کے وہ ہمدرد جنہوں نے ۶۵ سال سے اس ملک کو ترقی کا گہوارہ بنانے میں کوئی کسر نہ چھوڑی ؟ وہ زرداری جس نے کبھی بھوکی ننگی قوم کے پیسوں سے گھوڑوں کو مربے نہیں کھلائے؟ وہ شریف خاندان جس نے قوم کی ہڈیوں سے گودہ تک نچوڑ کر دنیا بھر میں اربوں ڈالر کے کاروبار نہیں لگائے؟ وہ الطاف بھائی جس نے روشنیوں کے شہرمیں پچیس سال میں پچیس ہزار لاشیں نہیں گرائیں؟ وہ اسفندیار ولی جس نے پختون قوم کو اس کی تاریخ کے نازک ترین موڑ پر ساڑھے تین کروڑ ڈالر کے عوض نہیں بیچا؟ وہ فضل الرحمن جس نے بینظیر سے لے کر مشرف اور زرداری سے لے کر شریفوں تک ہر حکومت میں چند وزارتوں کیلئے اسلام کا پاک نام نہیں بیچا؟یہ سیٹھی، یہ میر شکیل، یہ ارسلان افتخار، یہ سب کے سب اس کے مخالف  آخر کیوں ہوئے؟کیا اس وجہ سے کہ اس  بندےنے  قائد اعظم کے پاکستان کو پچھلے ۶۵ سال میں اس حال تک پہنچایا؟
   اور کیا چیز ہے جو اس بندے کو بے چین رکھتی ہے؟ ۶۳ سال کی عمر میں جبکہ لوگ اپنے بچوں کیساتھ پرسکون وقت گزارنا پسند کرتے ہیں، اس عمر میں یہ بندہ پاکستان کے طول و عرض میں دیوانوں کی طرح پھرتا ہے۔ آخر کیا چاہئیے اسے؟ اس کے مخالفین کہتے ہیں کہ اسے وزارت عظمیٰ کی طلب بے چین کیے ہوئے ہے۔ کیا واقعی؟  لیکن آخر وزارت عظمیٰ کی طلب کسی کو کیوں ہوتی ہے؟ پیسہ کے لئے؟ شہرت کیلئے؟ کرپشن کیلئے؟لیکن۔۔۔۔۔۔
پیسے کیلئے؟ لیکن پیسے کا تو اس  بندے کو لالچ نہیں اور یہ دنیا جانتی ہےاور اس کی ساری زندگی اس امر کی گواہ ہے۔ اس نے تو اپنا کرکٹ سے کمایا ہوا اکثر پیسہ بھی اس ملک کے غریبوں کیلئے  شوکت خانم ہسپتال  اور نمل یونیورسٹی میں جھونک دیا۔ پیسہ ہی چاہئیے ہوتا  تو برطانیہ میں کسی کاؤنٹی ٹیم کی کوچنگ سنبھالتا اور ساتھ ہی  کرکٹ میچوں میں کمنٹری  سے کروڑوں کماتا۔ پیسہ چاہئیے ہوتا تو جمائمہ خان سے طلاق کے عوض ہی (برطانوی قوانین کے مطابق) اربوں وصول کرسکتا تھا۔
شہرت کیلئے؟    لیکن عمران خان سے زیادہ شہرت  بھلا کس پاکستانی  کو  اللہ نے دی ہوگی ؟ وہ شخص کہ برطانوی شاہی خاندان جس کیساتھ اٹھنے بیٹھنے میں فخر محسوس کرتا ہے اور انڈیا سے ترکی اور ڈیووس تک بغیر کسی سرکاری عہدے کے اسے ہاتھوں ہاتھ لیا جاتا ہے۔ واحد پاکستانی لیڈر ہے جس کو بیرونی دنیا میں کرپشن یا سوئس اکاؤنٹس یا بھتہ خوری اور ٹارگٹ کلنگ کی وجہ سے نہیں جانا جاتا بلکہ اس کا نام اچھے لفظوں میں لیا جاتا ہے۔ اب ایسےبندے کو  بھلا مزید شہرت کی کیا ضرورت ہوگی؟
کرپشن کیلئے؟   لیکن کرپشن کا تو  یہ بندہ روادار ہی نہیں۔ پختونخوا میں ایک سال سے حکومت ہے نا اس کی۔ کوئی کہہ سکتا ہے ایک پیسے کی کرپشن کی بات اس کے بارے میں؟ کوئی کارخانہ لگایا ہو اس نے؟ کوئی رشتہ دار سرکاری عہدوں پر لگوا دیا ہو؟ کسی کی سفارش کردی ہو؟ کوئی پلاٹ، کوئی بینک اکاؤنٹ، کوئی  جدہ، ملائشیا، دبئی میں محل وغیرہ؟ نہیں۔ کچھ بھی نہیں۔ الٹا  واحد پاکستانی لیڈر ہے جس کے اثاثے ہر سال پہلے کے مقابلے میں کم ہوتے جارہے ہیں (ورنہ تو لوگ ایم این اے بن کر ہی سات نسلوں کا انتظام فرما لیتے ہیں)۔

تو پھر؟ آخر کیا چیز اس بندے کو چین نہیں لینے دیتی؟
 اس بندے کو سمجھنا ہو تو چند لمحوں کیلئے اپنے آپ کو اس کی جگہ رکھ کر  آنکھیں بند کرکے سوچیں۔
کیا بھکاری بننا آسان ہے؟ کسی کے آگے جھولی پھیلانا اور سوالی بننا؟ اور وہ بھی اپنے فائدے کیلئے نہیں بلکہ قوم کے سسکتے ہوئے غریب مریض بچوں کے واسطے۔ وہ کیا چیز ہے جس نے اس آکسفورڈ سے تعلیم یافتہ،  پاکستانی تاریخ کے مشہور ترین کرکٹراور کامیاب ترین کپتان کو بھکاری بننے پر مجبور کیا؟ گلی گلی ، شہر شہر، گاؤں گاؤں ۔ اپنی عزت نفس  کو پس پشت ڈال کر جھولی پھیلا کر، بھکاری بننے پر مجبور کیا؟  بیس سال سے یہ بندہ جھولی پھیلائے ملک اور بیرون ملک (صرف پاکستانیوں سے) پاکستانیوں کیلئے بھیک مانگتا ہے۔کوئی اسے بھکاری ہونے کے طعنے دیتا ہے، کوئی زکوٰۃ خان کہتا ہے، کوئی کسی اور طریقے سے مذاق اڑاتا ہے لیکن یہ بندہ پھر بھی پیچھے نہیں ہٹتا۔ یہ آسان نہیں ہے۔ خدا کی قسم یہ آسان نہیں ہے۔قدم قدم پر دل کو مارنا پڑتا ہے ۔ اپنی عزت نفس ، انا  اور فخر کا خون کرنا پڑتا ہے۔ یقین نہ آئے تو کبھی یہ کرکے دیکھ لیں۔ جھولی پھیلا کر کسی دن لوگوں کے سامنے کھڑے ہوں (وہ بھی اپنے لئے نہیں دوسروں کیلئے)۔ سرسید احمد خان نے علی گڑھ یونیورسٹی کیلئے اسی طرح جھولی پھیلائی تھی اور آج عمران خان  ان کے نقش قدم پر چلتے ہوئے نمل یونیورسٹی  اور شوکت خانم کیلئے ایسا  کرتا ہے۔کیا چیز ہے جوکسی بندے کو ایسےکام کرنے پر مجبور کرتی ہے؟

انسان کو اللہ نے بہت کمزور پیدا کیاہے۔ اس سے غلطیاں ہوتی ہیں اور کوتاہیاں بھی ہوتی ہیں۔ عمران خان  بھی اللہ کا پیدا کیاہوا ایک کمزور انسان ہی ہے۔ اس سے زندگی میں سینکڑوں ہزاروں غلطیاں اور کوتاہیاں ہوئی ہوں گی جن پر وہ شرمندگی کا اظہار بھی کرتا ہے لیکن یہ بات طے ہے کہ نہ تو کبھی اس کی نیت میں کھوٹ رہا ہے اور نہ کبھی اس نے عوام کا پیسہ کھایا ہے۔کوئی تو بتا دے کہ ۱۸ سال کی سیاسی زندگی  میں خان نے سیاست کو ایک بار بھی ذاتی فائدے، پیسے، فیکٹریوں یا کرپشن کیلئےاستعمال کیا ہو؟ دل پر ہاتھ رکھ کر بتائیےپاکستان میں کوئی ایک ایسا سیاستدان نظر آتا ہے جس کے بارے میں کہا جاسکے کہ وہ سیاست کو ذاتی فائدے اور کاروبار کیلئے استعمال نہیں کرتا بلکہ عوام کا سچا خیر خواہ ہے؟ شریف خان کے اربوں پاؤنڈ کے کاروبار؟۔ سیاست کا ثمر۔۔۔زرداری کے اربوں ڈالر کے اثاثے؟۔سیاست کا ثمر۔۔۔ اسفندیار ولی کے دبئی اور ملائشیا میں کاروبار اور محلات؟ ۔سیاست کا ثمر۔۔۔ الطاف حسین کے لندن میں منی لانڈرنگ کے لاکھوں کروڑوں پاؤنڈ؟۔ سیاست کا ثمر۔۔۔ ملا فضل کی دینی مدارس پر پھیلی دکانداری؟۔ سیاست کا ثمر۔۔۔
ایسے میں سوال تو اٹھتا ہے نا کہ سیاست کو کاروبار سمجھنے والے یہ لوگ عوام کی اصل معنوں میں فلاح کا کیوں سوچیں گے؟ جو تھوڑے بہت عوامی خدمت اور ترقیاتی منصوبوں کے ڈرامے یہ کرتے ہیں، اس میں بھی ڈٹ کر کھاتے ہیں اور ایسا کوئی کام نہیں کرتے جس سے ان کی سیاسی گرفت سے عوام کی آزادی کی راہ نکلے۔ تعلیم، صحت، پولیس، پٹواری، کرپشن، انصاف اور "نظام" ٹھیک  کرنا ان کی ترجیح ہی نہیں ہوتی۔ گلیاں نالیاں پکی کرنے ، چند فلائی اوور بنانے اور بسیں چلادینے کو ہی ترقی بتا کر یہ قوم کی نسلیں برباد کررہے ہیں۔ بیرونی ممالک سے ترقیاتی پراجیکٹس کے نام پر قرضے لیتے ہیں، آدھے سے زیادہ خود کھاتے ہیں اورباقی سے "جگاڑ" لڑا کر قوم پر ترقی کا احسان کرتے ہیں۔ جبکہ انہی کے زیر حکومت آبادی صاف پانی، پوری خوراک، بجلی، گیس، روزگار، انصاف اور صحت و تعلیم کو ترستی ہے۔ یہ سلسلہ کیا یونہی چلتا رہے گا؟ اگر ہاں تو آخر کب تک؟ کب تک یہ قوم سڑکوں، نالیوں اور بسوں کو "ترقی" سمجھتی رہے گی؟ شاید ہمیشہ ۔ کیونکہ ان غلاموں کی آزادی بہت مشکل ہوتی ہے جنہیں اپنی زنجیروں سے پیار ہوجائے۔
مجھے نہیں معلوم کہ  عمران خان   کا آزادی مارچ کامیاب ہوگا یا نہیں۔مجھے یہ بھی نہیں معلوم کہ خان کبھی  پاکستانی سیاست میں کامیاب ہوگا یا نہیں۔ مجھے یہ بھی نہیں معلوم کہ اس ملک میں تبدیلی لانے کا اور قائد کا پاکستان بنتے دیکھنے کااس کا خواب پورا ہوگا یا نہیں۔ لیکن ایک سیدھی سیدھی بات یہ ہے کہ  اگر آج عمران خان ناکام ہوگیا تو شاید اس قوم کو۶۵ سال سے حکمران طبقات کی غلامی سےکوئی نہیں نکال سکے گا۔ کیونکہ ان لوگوں نے "نظام" میں اپنی جڑیں اتنی دور تک پھیلا لی ہیں کہ انہیں اکھاڑ پھینکنا کسی عام بندے کے بس کی بات نہیں۔پولیس ان کی، پٹواری تحصیلدار سے لے کر کمشنر اور سیکرٹری تک ان کے۔ عدالتیں ان کی، جج ان کے، صحافی ان کے، اخبار اور ٹی وی چینل ان کے۔لوٹ مار کا پیسہ ان کے پاس بہت اور  غنڈوں بدمعاشوں گلو بٹوں کی فوج ان کے پاس۔ اگر عمران خان اپنی تمام تر قوت برداشت، اٹھارہ سالہ انتھک محنت، بہترین نیت ، عوام اور خاص کر نوجوانوں میں اعتماداور اچھی شہرت کیساتھ  ان کی جڑیں نہ اکھاڑ سکا تو مستقبل میں شاید کوئی اس راستے پر چلنے کی ہمت ہی نہیں کرے گا۔اس تھکادینے والے راستے پر ہمیں خان کے دست و بازو بننا ہی ہوگا۔اس جدوجہد کو دل لگی نہیں سمجھنا۔ اسے "دل کی لگی" بنانا ہوگا۔ان  زرداری، شریف، شجاعت، اسفندیار، اور فضل الرحمن جیسوں نے اپنی اگلی نسلیں  ہم پر حکمرانی کیلئے تیار کر لی ہیں۔ جس طرح ہم ان کے غلام ہیں، اسی طرح یہ ہمارے بچوں کو موسی گیلانی، بلاول زرداری، مریم نواز، حمزہ شہباز، مونس الہی، مولانا لطف الرحمن اور ایمل ولی خان کی غلامی میں دینا چاہتے ہیں۔ یاد رکھیں یہ عمران خان یا اس کے بچوں کے مستقبل کی جنگ نہیں ہے۔ عمران خان کے بچے اپنی زندگی بہترین گزار رہے ہیں اور عمران خان بھی اپنی زندگی بھرپور طریقے سے گزار چکا ہے۔ یہ ہماری اور اور آپ اور ہمارے بچوں  اور ان کے بچوں کے مستقبل کی جنگ ہے۔  
خیر۔۔۔ بات کہاں سے شروع ہوئی تھی اور کہاں نکل گئی۔ یہی تو مسلہ ہے۔ دل لگی سے بات شروع ہوتی ہے اور "دل کی لگی" بن جاتی ہے۔
ایک واقعہ سناتا ہوں۔ (یہ واقعہ میں پہلے بھی  تحریر کرچکا ہوں لیکن بہت سوں نے شاید نہ پڑھا ہو)۔


یہ قصہ ہے۹۳۔۱۹۹۲  کا۔ قبائلی علاقے باجوڑ ایجنسی کے علاقے خار میں ایک سکول کے قریب گراؤنڈ میں عوام کا ایک جم غفیر جمع تھا جس میں اسی سکول کی دوسری  تیسری جماعت کا ایک بچہ بھی محض تجسس سے مجبور ہوکر "دل لگی" کیلئے  جاکھڑا ہوا۔ گراؤنڈ میں ایک طرف سٹیج بنا ہوا تھا اوراس پر کھڑا  ایک مشہور کھلاڑی  تقریر کررہاتھا۔تقریر چونکہ اردو میں تھی  اس لئےاس  چھوٹے سے پختون  بچے کو سمجھ نہیں آرہی تھی کہ تقریر کا موضوع کیاہے۔تقریر کے اختتام پر اچانک ہی بھیڑ میں سے کچھ لوگوں نے چادریں پھیلا کر لوگوں کے درمیان میں سے گزرنا شروع کیا۔ لوگ چادروں میں کچھ نہ کچھ رقم ڈال رہے تھے۔ بچے نے پاس کھڑے ایک لیویز  (قبائلی پولیس)والے انکل سے پوچھا کہ یہ لوگ پیسے چادروں میں کیوں ڈال رہے ہیں؟لیویز اہلکار نے بچے کوبتایا کہ یہ کسی ہسپتال کیلئے چندہ اکھٹا کررہے ہیں۔بچے نے اپنی جیب ٹٹولی اور پاکٹ منی کے طور پر ملا ہوا ایک روپیہ نکال لیا۔ایک لمحے کیلئے سوچا کہ دن بھر کیلئے یہی ایک روپیہ پاکٹ منی ملتی ہےاور اگر یہ ایک روپیہ بھی چندے میں دے دیا تو پورا دن سکول میں  بھوکاہی رہنا پڑے گا ۔لیکن پھر سٹیج پر کھڑے شخص کی طرف نظریں اٹھ گئیں  اور اگلے ہی لمحے فیصلہ ہوگیا۔ بھوکا رہنے کا خوف ہار گیا اور بچے نے وہ "ایک روپیہ" چادر میں ڈال دیا۔

وقت گزرتا گیا۔وہ دن کہیں بہت پیچھے رہ گیا۔ اس سٹیج پر ہسپتال کیلئے چندہ جمع کرتے مشہور کھلاڑی کوشایدپتہ بھی  نہیں چلا کہ اس کے اسپتال کی بنیادوں میں محض  "دل لگی"  کیلئے کھڑے ایک بچے کا "ایک روپیہ" بھی شامل ہے۔ لیکن وہ بچہ آج بیس بائیس سال بعد بھی اس "ایک روپیہ" کی تاثیر نہیں بھولا۔ خان سے وہ اس بچے کی  پہلی اور آخری ملاقات تھی (اگر دور سے سٹیج پر دیکھ لینے کو ملاقات سمجھیں تو)۔ اس کے بعد نہ وہ بچہ کبھی خان سے ملا اور نہ ہی (کچھ مجبوریوں کے سبب) مستقبل میں ایسا کوئی امکان ہے۔لیکن خان سےاس کی عقیدت ہر گزرتے دن کیساتھ بڑھتی جاتی ہے۔وہ چند لمحوں کی  دل لگی اس  بچے  کیلئے "دل کی لگی"  بن گئی۔ ایسا ہی ہوتا ہے دل کے معاملوں میں۔ اسی کا نام محبت ہے شاید۔
الیکشن سے کچھ پہلے خان کی زندگی پر ایک چھوٹی سی ڈاکومینٹری ویڈیو بنائی تھی۔ اس بندے کو سمجھنے کیلئے کام آسکتی ہے۔۔۔
Video Link: https://www.facebook.com/photo.php?v=336108789844779
.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
.
The writer is a tribesman from Bajaur Agency (FATA) and tweets at @ZalmayX .
(No official association with PTI)
.
....................

Disclaimer: This blog is not an official PTI webpage and is run by a group of volunteers having no official position in PTI. All posts are personal opinions of the bloggers and should, in no way, be taken as official PTI word.
With Regards,
"Pakistan Tehreek-e-Insaf FATA Volunteers" Team.


Thursday, August 7, 2014

Election 2013, Rigging & PTI's Azadi March

By: Shah Zalmay Khan
.
الیکشن، دھاندلی اور آزادی مارچ
.

الیکشن تو پاکستان میں بہت ہوئے۔ مختلف ترغیبات کے تحت لوگ ووٹ بھی ڈالتے رہے۔کوئی ذات برادری کے چکر میں، کوئی مسلک فرقے یا زبان کے نام پر، کوئی گلی محلہ پکا ہونے کے چکر میں اور کوئی صرف اور صرف قیمے والے نان  اور ایک پلیٹ بریانی کیلئے ۔ لیکن ۲۰۱۳ کے الیکشن سے پہلے شاید ہی کوئی الیکشن ایسا رہا ہو جب تقریباٌ پورا ملک  ہی سیاسی ہوگیا ہو۔ پاکستان جیسا ملک، جہاں لوگ سیاست کو گالی اور سیاستدانوں کو ارذل المخلوقات سمجھنے لگے  تھے، اسی ملک کے لوگ سیاست کے بخار میں مبتلا ہونے لگے۔ گلی محلوں، حجروں چوپالوں اور کالجوں یونیورسٹیوں تک میں سیاسی بحث و مباحثے ہونے لگے۔ وہ نوجوان طبقہ جو سیاست سے بیزار تھا، سوشل میڈیا کی برکت سے سیاست میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے لگا۔اور اس سارے سیاسی انقلاب کا محرک ایک ہی شخص تھا۔ عمران خان۔ اس انقلاب کی پہلی نشانی  ۳۰  اکتوبر  ۲۰۱۱  کو مینار پاکستان پر تاریخ ساز جلسہ تھی۔ اس جلسے کے مقام تک پہنچنے کیلئے خان نے لگاتار کئی سال محنت  کی اور پھر اس  جلسے کے بعد تو جیسے اس پر جنون ہی سوار ہوگیا ہو۔ ملک کے کونے کونے میں گیا۔ کراچی، کوئٹہ، لاہور، پشاور، گلگت، وہ کون سی جگہ تھی جہاں خان قوم کو جگانے نہیں پہنچا؟ صرف الیکشن کی بیس روزہ انتخابی مہم میں ہی ستر سے زیادہ تاریخ ساز جلسے کئے۔ ایک ایک دن میں پانچ چھ جلسے۔ یہاں تک کہ ایک ایسے ہی جلسے میں لفٹر سے گر کر کمر پر چوٹ لگوا بیٹھا لیکن ہسپتال کے بستر سے بھی وہ قوم کو ووٹ دینے کیلئے نکلنے کا کہتا رہا۔
عمران خان کی یہی انتھک محنت تھی جس کے نتیجے میں ۱۱ مئی کو پاکستانی قوم مثالی جوش و خروش سے ووٹ دینے نکلی۔ بیرون ملک سے ہزاروں پاکستانی صرف ووٹ دینے پاکستان آئے۔ ضعیف مردوخواتین وہیل چئیروں پرگھنٹوں  ووٹ کی قطاروں میں انتظار کرتے رہے۔کالجوں یونیورسٹیوں کے نوجوان تبدیلی رضاکار بنتے رہے۔ الیکشن کے دن عید کا سا یہ سماں اس سے پہلے بھی کبھی کسی نے دیکھا تھا؟ پاکستانی تاریخ کا سب سے زیادہ ووٹر ٹرن آؤٹ (ساٹھ فیصد) اس الیکشن میں نظر آیا۔ لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن جوں جوں ۱۱ مئی کی شام گہری ہوتی گئی ، عوامی مینڈیٹ پرشب خون مارنے والے اپنا کھیل کھیلنے لگے۔ رات کے گیارہ بجے بڑے میاں نے فاتحانہ تقریر کرتے ہوئے پتہ نہیں کس کو مخاطب کیا: "میرے ہاتھ مت باندھنا۔ مجھے بھرپور مینڈیٹ دینا"۔ (جبکہ ووٹنگ ۵ گھنٹے قبل ختم ہوچکی تھی)۔بس پھر کیا تھا۔ جن کو یہ پیغام دیاگیا تھا، وہ اپنا "کام" کرنے لگے۔ الیکشن کے وہ نتائج جو شام سے ہی دھڑا دھڑ آرہے تھے، وہ رات بارہ بجتے ہی رک گئے۔ خیبر پختونخوا کے دوردراز ترین علاقوں سے بھی نتائج رات بارہ بجے تک فائنل ہوگئے لیکن پنجاب کے شہری علاقوں کے نتائج اگلے دن دوپہر تک رکے ہی رہے۔ جھرلو اپنا کام کرتا رہا اور اگلا  دن آیا تو پتہ چلا کہ  درجنوں حلقوں میں تحریک انصاف کےجیت کی طرف گامزن امیدوار معجزانہ طور پر ہار چکے تھے۔ پنجاب سے تحریک انصاف کے صرف وہی امیدوار اپنا الیکشن چوری ہونے سے بچا سکے جوسسٹم کے "پرانے کھلاڑی" ہونے کی وجہ سے واقف تھے کہ پریزائڈنگ افسر کے دفتر سے ریٹرننگ افسر کے دفتر تک کیسے جیتنے والے ہار جاتے ہیں۔صرف شاہ محمود قریشی، جاوید ہاشمی، غلام سرور خان اور  رائے حسن نواز کھرل اپنے حلقے چوری ہونے سے بچا سکے۔شیخ رشید نے اپنا حلقہ بھی بچایا اور ساتھ ہی عمران خان کا پنڈی والا حلقہ بھی بچا لیا۔جبکہ شفقت محمود کسی زمانے میں  ڈپٹی کمشنر اور آر اورہنے کی وجہ سے اپنی سیٹ بچا لے گئے۔ ستم ظریفی تو دیکھئے کہ جس عمران خان کے نام پر شفقت محمود جیسے سیاسی طور پر گمنام بندے نے لاہور سےایک لاکھ ووٹ لیا،وہی عمران خان خود لاہور سے ہار گیا۔ ہے نا حیرت انگیز بات؟
کہانی یہا ں ختم نہیں ہوئی۔نون لیگ کے تنخواہ دار صحافی (خاص کر جیو ) قوم کو بتانےلگے کہ الیکشن میں چھوٹی موٹی بے ضابطگیاں ہوئی ہوں گی لیکن بہر حال الیکشن شفاف تھے۔ افتخار احمد اور کامران خان جیسے لوگ قوم کو یقین دلانے لگے کہ الیکشن میں دس فیصد اضافی ٹرن آؤٹ دراصل عمران خان کی انتھک محنت کا نتیجہ نہیں تھا بلکہ وہ لوگ جنہوں نے ۱۹۹۷ کے "کلین سویپ" والے الیکشن میں بھی شریفوں کو ووٹ ڈالنا گوارا نہ کیا، وہ اس بار میاں صاحب کی محبت میں نادیدہ طور پر گرفتار ہوگئے۔ ہے نا عجیب بات؟ نئے ووٹر کو نکالنے کیلئے محنت ساری عمران خان نے کی اور اس کی اپیل سے متاثر ہوکر ووٹ دینے نکلے بھی، لیکن معجزانہ طور پر پولنگ بوتھ میں جاکر ووٹ شریفوں کو دے آئے؟ کون کہتا ہے آج کل معجزے نہیں ہوتے؟ نون لیگ کا "بھاری مینڈیٹ" بھی ایک معجزہ تھا جس کے ڈیزائنر تھے افتخار چوہدری (جن کے نیچے آر او زتھے)، نجم سیٹھی (جنہوں نے پنکچر لگوائے) اور فخرو بھائی (جو ضروری کام سے سوتے رہے)۔
کہانی یہاں بھی ختم نہیں ہوئی۔ عمران خان خود بستر پر تھا اور تحریک انصاف کی باقی لیڈرشپ جیتی ہوئی سیٹیں ہارنے کے سبب شاید شاک میں تھے۔ یہ بھی پاکستانی تاریخ میں شاید پہلی بار ہوا کہ لیڈر شپ کے بغیر ہی نوجوان ازخود کراچی اور لاہور کی سڑکوں پر دھرنے دے کر بیٹھ گئے اور لیڈر شپ کو ان کے گھروں سے کھینچ کر لایا گیا۔دھاندلی کے ثبوتوں کی تصاویر اور ویڈیوز سوشل میڈیا سے ہوتے ہوئے مین سٹریم میڈیا پر چلنے لگیں اور لوگ دھاندلی کی شدت دیکھ کر کانوں کو ہاتھ لگانے لگے۔آہستہ آہستہ الیکشن کی "شفافیت" کا مصنوعی پردہ اٹھنے لگا اور دھاندلی کی تصویر سامنے آنے لگی۔لیکن اس سب کے باوجود عمران خان نے مشروط طور پر الیکشن کو تسلیم کرنے کا اعلان کیا۔شرط یہ رکھی کہ چار حلقے کھول کر  دھاندلی کے ذمہ داروں  کو سزا دی جئے اور اگلے الیکشن کیلئے بامعنی الیکٹورل ریفارمز کی جائیں۔
 لیکن شریفوں نے تو عجیب ہی تماشہ لگالیا۔ بجائے دھاندلی کے ذمہ داروں کو سزا دینے کے، ایک ایک کو نوازنے کا سلسلہ شروع ہوگیا۔کرکٹ  سے دور دورتک کوئی نسبت نہ رکھنے والے نجم سیٹھی کو "سونے کی چڑیا" (کرکٹ بورڈ) سونپ دی گئی۔ جیو  اور جنگ گروپ کو حق خدمت کے طور پر اربوں روپے کے سرکاری اشتہارات دیے گئے اور پھر جیو سوپر کو کروڑوں کے کرکٹ رائٹس۔جیو کے الیکشن سیل کے انچارج افتخار احمد کو پنجاب پارکس اینڈ ہارٹی کلچر اتھارٹی میں وائس چئیر مین لگادیا گیا جبکہ ان کے صاحبزادے کو میٹرو بس اتھارٹی میں کھپا دیا گیا ۔جنگ گروپ ہی کے رؤف طاہر کو "الیکشن خدمات" کے عوض ریلوے میں ڈی جی پی آر لگادیا گیا،عرفان صدیقی کو وفاقی وزیر کا عہدہ ملا جبکہ عطاء الحق قاسمی کو نشان امتیاز پرہی اکتفا کرنا پڑا۔پنجاب میں پنکچر سیل کے انچار ج جسٹس رمدے کے بیٹے کو اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل بنادیا گیا۔اور آخرکار دھاندلی کے سب سے بڑے کردار افتخار چوہدری کو اصلی معنوں میں "سونے کی کان" سونپ دی گئی جب ا؂ن کی ذاتی خواہش پر  ان کے بدنام زمانہ  بلیک میلر بیٹے ارسلان  کو رکوڈک اوربلوچستان  کے دوسرے  وسائل کا مختار کل بنادیا گیا (بغیر کسی متعلقہ تجربے کے)۔ یہ سب وہ واقعاتی شہادتیں  ہیں  جن سے ثابت ہوتا ہے کہ الیکشن میں اہم رول رکھنے والوں کو شریفوں نے نوازا۔ اور کیوں نوازا؟ ظاہر ہے کسی "خدمت" کے صلے میں۔ اور وہ خدمت کیا تھی؟ دھاندلی کے علاوہ اور کیا ہوسکتی ہے؟ ورنہ ارسلان کا معدنیات سے کیا تعلق، سیٹھی کا کرکٹ سے کیا واسطہ اور افتخار احمد کو باغبانی سے کیا نسبت؟
کہانی یہاں بھی ختم نہیں ہوئی۔الیکشن میں دھاندلی ہوئی، سب کو نظر آیا لیکن خان  کو شاید یہ اندازہ نہیں تھا کہ "شریف" اس نظام میں کس حد تک جڑیں پھیلاچکے ہیں۔خان نے دھاندلی کی شکایت کی  تو جواب ملا "ٹریبونل جائیں  نا جناب"۔تحریک انصاف کے کچھ لوگ تو دھاندلی سے مایوس ہی ہوکر گھر بیٹھ گئے اور کچھ نے الیکشن ٹریبونلوں میں اپیلیں دائر کردیں۔اب ٹریبونلوں میں بیٹھا کون تھا؟ اکثر انہی  شریفوں کے پچھلے ۳۰ سال میں لگائے ہوئے 'نظام کے پرزے"۔بہت سی  اپیلیں تو سنے بغیر ہی مختلف تکنیکی وجوہات کا بہانہ کرٹریبونلوں نے خارج کردیں  (جن کا شریفوں کے نمک خوار ڈھنڈورا پیٹتے ہیں کہ اکثر اپیلیں تو حل ہوگئیں۔ بھیا جب سنی ہی نہیں گئیں تو حل کیا ہوا؟) جہاں جہاں تحریک انصاف کا کیس مضبوط تھا ، وہاں لاہور کی "شریف  ہائیکورٹ " زندہ باد۔سٹے آرڈر پر سٹے آرڈر۔ٹریبو نلوں کوقانون کے مطابق ۱۲۰ دن میں فیصلہ کرنا تھا جو کہ نہ ہوسکا۔جب خان نے ٹریبونلوں کی ناانصافی کی شکایت کی تو شریفوں کے نمک خواروں نے عدلیہ کی طرف رخ کرنے کا مشورہ دیا۔خان نے اعلیٰ عدلیہ کا دروازہ کھٹکھٹایا  لیکن شاید اسے معلوم نہیں تھا کہ یہاں بھی انصاف صرف "شریفوں" کیلئے ہے۔ چونکہ خان تو بالکل ہی غیر شریف تھا اسلئے عدلیہ  سے "شرمناک" جواب ملا کہ شراب کی بوتلوں  اور سموسوں کی قیمت پر سوموٹو لینے والی مصروف عدلیہ کے پاس عوامی مینڈیٹ چوری ہونے جیسے معمولی جرم  کا کیس سننے کی فرصت نہیں۔(حالانکہ یہی"مصروف عدلیہ"  اس کے بعد بھی جب جب شریفوں یا سیٹھیوں کو "انصاف" کی ضرورت پڑی، چند گھنٹوں کے نوٹس پر فراہم کرتی رہی)۔"شریف عدلیہ" سے مایوسی کے بعد خان کو کہاگیا کہ پارلیمنٹ کا فورم استعمال کریں نا۔خان نے یہ چینل بھی استعمال کرکے دیکھ لیا۔ کئی دفعہ پارلیمنٹ میں الیکشن ریفارم کا مطالبہ دہرایا اور ہر دفعہ شریفوں اور ان کے نمک خواروں نےزبانی زبانی اس سے اتفاق کیا لیکن "کچھ کرنے" کی زحمت پھر بھی نہ کی۔ تحریک انصاف نےالیکشن ریفارم کے حوالے سے دو بل اسمبلی میں جمع کرائے لیکن ڈیڑھ سال گزرنے کے بعد بھی دھاندلی کے ستون  سپیکرصاحب کو یہ بل پارلیمنٹ میں لانے کی توفیق نہ ہوئی۔ یہاں تک کہ  پارلیمنٹ کی متعلقہ سٹینڈنگ کمیٹی کا ڈیڑھ سال میں  اجلاس تک نہ ہوسکا۔
 لیکن کہانی یہاں بھی ختم نہیں ہوئی۔  خان نے ملک کے نازک حالات کو دیکھتے ہوئے نظام چلنے دینے کیلئے کسی فوری احتجاجی تحریک سے گریز کیا۔ چار حلقوں میں تصدیق اور الیکشن ریفارم کے مطالبات پیش کرکے وہ خیبر پختونخوا میں "تبدیلی" کے پروگرام پر توجہ دینے لگا۔اس نے یہی سوچا کہ تحریک انصاف کی پالیسیاں پختونخوا میں نافذ کرکے  ۲۰۱۸ کے الیکشن کیلئے پختونخوا کو  رول ماڈل بناکر پیش کیا جائے۔اسلئے عمران خان کی رہنمائی میں پختونخوا میں قانون سازی اور گورننس ریفارمز پر تیزی سے کام ہونے لگا۔ہر دوسرے ہفتے خان پشاور میں آموجود ہوتا اور کام کی رفتار کا جائزہ لیتا۔ چند وزیروں کی کرپشن کا علم ہوا تو حکومت  کی کمزوری کی فکر کئے بغیر ان کو حکومت سے نکال باہر کیا۔تعلیم، صحت، پولیس اور پٹواری کے نظام کی بہتری کیلئے اصلاحات عمل میں آئیں۔ نیٹو سپلائی اور ڈرون حملوں پر تحریک انصاف کی صوبائی حکومت نے قوم کے جذبات کی ترجمانی کی۔ یہ سلسلہ شاید پانچ سال یوں ہی چلتا لیکن۔۔۔۔۔۔۔

لیکن شریفوں کو اس بات کا احساس تھا کہ اگر عمران خان پختونخوا میں اپنے ایجنڈے پر عمل کرنے میں کامیاب ہوگیا اور صوبے کی حد تک تبدیلی آگئی تورائیونڈ کی سیاست کی دکان ہمیشہ کیلئے بند ہوجائے گی۔بس پھر کیا تھا۔ بہانے بہانے سے وفاق نے صوبے کو تنگ کرنا شروع کردیا۔صوبے کو مالی طور پر کمزور کرنے کیلئے این ایف سی ایوارڈ کے تحت واجب الادا رقوم روکی جانے لگیں۔ بجلی کا خالص منافع جو کبھی مشرف یا زرداری تک نے نہیں روکا تھا، وہ ۲۰۱۳ کے پورے سال میں ایک پائی نہیں دی گئی۔ سب سے زیادہ اور سب سے سستی بجلی پیدا کرنے والے پختونخوا کو بجلی کی طویل ترین لوڈ شیڈنگ کا نشانہ بنایا جانے لگا۔ وفاق کے زیر انتظام پیسکو صوبے کے لوگوں کو اووربلنگ، ٹرانسفارمروں کی مرمت نہ کرنے اور کم وولٹیج جیسے طریقوں سے زچ کرنے لگا ( یوں عام لوگ جنہیں وفاقی اور صوبائی محکموں کا ادراک نہیں، وہ صوبائی حکومت سے ناراض ہونے لگے)۔عابد شیر علی جیسے وفاقی وزراء ہر دوسرے ہفتے پشاور آکر پختونوں کو بجلی چور اور عمران خان کو چوروں کا سرپرست کہہ کر تذلیل کرنے لگے۔ وفاقی وزراء خان کو بجلی بنانے کے طعنے دیتے رہے لیکن جب صوبائی حکومت نے بجلی کا مسلہ حل کرنے  کیلئے بجلی کے بڑے پلانٹس کی تعمیر کیلئے وفاق کی "ساورن گارنٹیاں" مانگیں تو وفاق نےمعاملہ  سردخانے میں ڈال دیا۔ پختونخوامیں چونکہ گیس  صوبے کی اپنی ضرورت سے زائد پیدا ہوتی ہے اسلئےصوبائی حکومت نے گیس پاور پلانٹ لگانے کا ارادہ کیا اور وفاق سے اپنے حصے کی گیس دینے کا مطالبہ کیا تو وفاق نے سنی ان سنی کردی۔بیوروکریسی کی سینئیر پوسٹوں (سیکرٹری وغیرہ) پر وفاقی سول سروس کے افسران تعینات ہوتے ہیں جن کی ترقی وغیرہ کی لگام اسلام آباد کے پاس ہوتی ہے۔ پختونخوا میں اہم عہدوں پر تعینات  وفاقی افسران کو مبینہ طور پر "گو سلو" پالیسی پر عمل کی ہدایت دی گئی۔ جو فائل دو دن میں کلئیر ہونی تھی، اس پر دو ہفتے لگائے جانے لگے۔صوبائی حکومت کے احکامات میں روڑے اٹکائے جانے لگے۔صوبائی حکومت کو اعتماد میں لئے بغیر شمالی وزیرستان میں آپریشن شروع کردیا گیا جس کے تمام متاثرین کا بوجھ پختونخوا پر ڈال دیا گیا، جبکہ سندھ اور پنجاب نے اپنے دروازے ان کیلئے بند کرلئے۔صوبائی حکومت نے ان دس لاکھ متاثرین کی خدمت اور بحالی کیلئے وفاق سے بار بار فنڈز مانگے لیکن آج تک اس مد میں صوبے کو کچھ نہیں ملا۔جتنی امداد کے اعلانات وزیر اعظم  یا وزیر اعلیٰ پنجاب نے کیے وہ صوبائی حکومت کو نہیں دیے گئے بلکہ اپنے ہی وفاقی وزیر عبد القادر بلوچ کے محکمے سیفران اورنون لیگ کے گورنر سیکرٹریٹ کے ماتحت ایف ڈی ایم اے کو دے دیے گئے ۔یاد رہے کہ سوات اور باجوڑ آپریشن میں اس وقت کی زرداری حکومت نے تمام فنڈزپختونخوا کی صوبائی حکومت کو دے دیے تھے جس کی وجہ سے صوبے پر مالی بوجھ بھی نہیں پڑا اور آئی ڈی پیز کے مسائل بھی بہتر طورپر حل ہوتے رہے۔ آئی ڈی پیز کی مدد کیلئے تمام انفراسٹرکچر مثلاٌ ہسپتال، سکول، سینی ٹیشن،، پانی، بجلی وغیرہ کے وسائل صوبائی حکومت کے استعمال ہورہے ہیں لیکن وفاق باوجود ٹی وی پر اعلانات کے صوبے کو ایک پیسہ نہیں دے رہا۔

یہ اور اس جیسے وفاقی حکومت کے بےشمار اقدامات دیکھ کر خان کو سمجھ آگئی کہ چاہے کچھ بھی ہوجائے، یہ شریف  نہ ہی اسے پختونخوا میں ڈیلیور کرنے  دیں گے اور نہ ہی ۲۰۱۸ کے الیکشن  سے پہلے الیکٹورل ریفارمزکریں گے۔الیکشن کمیشن، عدلیہ اور پارلیمنٹ کے تمام فورمز کو شریفوں کی "بی، سی اور ڈی ٹیم" بنے دیکھ کر خان کے پاس دو ہی راستے رہ گئے۔
۔(۱) خاموشی سےشریفوں کی پختونخوا کو ناکام کرنے کی حرکتیں دیکھتا رہے اور ۲۰۱۸ کے الیکشن بھی ۲۰۱۳ کی طرح اسی گلے سڑے الیکشن سسٹم کے تحت لڑ کر دھاندلی سے ہارے اور نیا پاکستان کا خواب ہمیشہ کیلئے بھول جائے۔
۔(۲) شریفوں کو ان کی حرکتوں سے باز رکھنے کیلئے خم ٹھونک کر میدان میں آجائے اور ان پر اتنا عوامی دباؤ ڈالے کہ وہ پختونخوا حکومت کو کام کرنے دیں اور ساتھ ہی الیکشن نظام بھی ٹھیک کریں۔ ورنہ پھر وہی۔ دمادم مست قلندر۔
خان نے خاموشی سے ہتھیار ڈالنے کے بجائے دوسرا آپشن چنا  اور وہی راستہ اختیار کیا جس کی طرف وہ الیکشن کے اگلے دن سے ہی اشارہ کررہا تھا کہ "اگر قانونی راستوں سے انصاف نہ ملا تو پھر فیصلہ عوامی طاقت ہی کرے گی"۔

خان نے اس مقصد کیلئے  شریفوں کو ان کے ہوم گراؤنڈ (پنجاب) میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا۔ ۱۱ مئی سے وفاقی دار الحکومت، شمالی پنجاب (سیالکوٹ)، مرکزی پنجاب (فیصل آباد) اور جنوبی پنجاب (بہاولپور) میں شدید ترین گرمی میں بھرپور سیاسی طاقت کا مظاہرہ کیا۔شریفوں کی دھاندلی زدہ جمہوریت اور جعلی مینڈیٹ کی قلعی کھولی اور پھر ۱۴ اگست کو اسلام آباد میں آزادی مارچ کے نام سے  فیصلہ کن پڑاؤ ڈالنے کا اعلان کردیا۔
سوچنے کی بات یہ ہے کہ تقریباٌ ہرجماعت دھاندلی ہونے کی بات کررہی ہے لیکن عمران خان کے علاوہ کوئی بھی اس کے خلاف عملی طور پر کچھ کرنے میں دلچسپی نہیں رکھتا۔ پیپلز پارٹی کو سندھ مل گیا، ان کی لوٹ مار جاری ہے تو وہ جمہوریت بچانے کے بہانے سے چپ۔ملا فضل الرحمن کو کشمیر کمیٹی مل گئی تو وہ چپ۔ اچکزئی صاحب کو بھائی کیلئے گورنری مل گئی تو وہ صم بکم۔ واحد عمران خان ہے جو کہہ رہا ہے کہ اگر الیکشن دھاندلی زدہ تھا  (جیسا کہ سب پارٹیاں کہہ رہی ہیں) تو پھر جمہوریت کہاں کی؟ پس صرف عمران خان اس عوامی چوری  کے خلاف  عملی جدوجہد کررہاہے۔ ورنہ اقتدار اور لوٹ مارہی مقصد ہوتا تو خاموشی سے شریفوں سے مک مکا کرکے پختونخوا میں بیٹھ کے "کھاتا رہتا" اور فرینڈلی اپوزیشن کرتا۔ لیکن بے بس قوم کا درد خان کو بے چین کیے ہوئے ہے۔وہ جانتا ہے کہ اگر اس بار دھاندلی کے ذمہ دار بچ گئے اور اس الیکشن کا نظام صحیح نہ ہوا توآئیندہ کبھی کوئی شریف اور پڑھا لکھا درد دل رکھنے والاشخص سیاست میں نہیں پڑے گا۔ کوئی ووٹ ڈالنے کیلئے گھر سے نکلنے کی زحمت نہیں کرے گا  (کہ ویسے بھی چوری ہوجانا ہے ووٹ)۔ یہ عمران خان کی جنگ نہیں ہے۔ یہ اس ملک میں جمہوریت کی بقا کی جنگ ہے۔ کہ حکومت کافیصلہ "ووٹ ڈالنے والے" کریں گے یا پھر "ووٹ گننے والے"؟
نوٹ: آزادی مارچ کے حوالے سے ذہنوں میں اٹھنے والے سوالات کے جوابات سمجھنے کیلئے ضروری ہے کہ "مطالبہ" اور "مقصد" کا فرق سمجھا جائے۔ سیاست میں "مطالبہ" انتہائی ہی  ہوتا ہے۔ لیکن دباؤ اور مذاکرات کے بعد بات "مقصد" پر آتی ہے۔ اب اس سلسلے میں تحریک انصاف کا مطالبہ بےشک انتہائی ہے  یعنی "حکومت کا استعفیٰ اور نیا الیکشن"۔ لیکن "مقصد" ایک ہی ہے  اور وہ ہے"بامعنی الیکٹورل ریفارمز"۔ رہا سوال انتہائی مطالبوں اور جلسوں جلوسوں یا لانگ مارچ کا۔ تو یہ شریف لاتوں کے بھوت ہیں، باتوں سے ماننے والے نہیں۔ان پرمطالبوں سے عوامی   دباؤ نہ ڈالیں، یہ سو سال  الیکٹورل ریفارمز نہ ہونے دیں گے۔سر پر "مطالبے" کا پستول رکھیں گے تو ہی  "مقصد" کا بٹوہ ملے گا۔
۔ (کراچی  والے تو اس کا بہتر تجربہ رکھتے ہیں :پ)۔ 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
.
The writer is a tribesman from Bajaur Agency (FATA) and tweets at @ZalmayX .
(No official association with PTI)
.
....................

Disclaimer: This blog is not an official PTI webpage and is run by a group of volunteers having no official position in PTI. All posts are personal opinions of the bloggers and should, in no way, be taken as official PTI word.
With Regards,
"Pakistan Tehreek-e-Insaf FATA Volunteers" Team.